کمی کہاں ہے آخر


دین اسلام سے بہتر ضابطہء حیات کوئی بھی مذھب نہیں دے سکتا پھر بھی اسلام پر چلنے والے ہی سب سے زیادہ پستی میں کیوں ہی … ہم لوگ روزے بھی رکھتے ہیں نمازیں بھی پڑھتے ہیں ..زکواتیں بھی دیتے ہیں ..مذھب پر سب سے زیادہ کام بھی ہمارے ہاں ہو رہا ہے ..مذھبی اجتماعات بھی ہو رہے ہیں ..رائے ونڈ میں 20 لاکھ لوگ جمع ہو کر 40 لاکھ ہاتھ اٹھا کر دعائیں بھی کرتے ہیں مگر نہ ہی کشمیر آزاد ہوتا ہے نہ فلسطین آزاد ہوا نہ عراق و افغانستان کے حالات بدلے .. کشمیر تو پاکستان کو کیا ملتا الٹا آدھا پاکستان گنوا دیا ہم نے ..کیا وجہ ہے اس سب کی .. کہاں کمی ہے .. کیوں 63 سالوں سے ہمارا ہر قدم الٹا پڑ رہا ہے ..
ہم سفر کی دعا پڑھ کر سواری پر سوار ہوتے ہیں .. پھر بھی ہماری ہی ٹرینیں
آٹھ آٹھ گھنٹے لیٹ ہو جاتی ہیں .. انہیں ہی زیادہ حادثے ہوتے ہیں .. جبکہ
کافروں کے پاس تو سفر کی دعا بھی نہیں پھر بھی ان کی ٹرینیں تو آٹھ منٹ بھی
لیٹ نہیں ہوتیں .. شاذ و نادر ہی کوئی حادثہ ہوتا ہے .. ایسا کیوں ہے آخر ..
صحیح بات تو یہ ہے کہ ہم عبادات تو کرتے ہیں دعائیں بھی کرتے ہیں لیکن
اسلام کے اصولوں پر نہیں چلتے ..ہم اسلام کی روح کو اس مغزکو نہیں سمجھتے
.. بس اندھی تقلید کرتے ہیں .. نماز کا ہر رکن انسان کی تربیت کے لئے ہے ..
صف بندی اس لئے ہے کہ ٹریفک سگنل پر بھی صف بندی کی جائے ..بس اسٹاپ ..
راشن شاپ پر بھی صف بندی کی جائے ..
سجدہ بتاتا ہے کہ جو سر اللہ کے آگے جھکتا ہے وہ کسی اور کے آگے نہیں جھک
سکتا .. مگر آج ہمارا سر ہر جگہ جھکا ہوا ہے ..کسی کا آفس میں ترقی کے لئے
.. کسی کا الیکشن میں ٹکٹ کے لئے ..صفائی نصف ایمان ہے .. لیکن ہم مسجدوں
تک کے باتھ رومز صاف نہیں رکھ سکتے ..ریسٹورینٹس کے باورچی خانوں کی صفائی
کا کیا حال ہے کس کو خیال ہے ..
ہم حج پر جاتے ہیں لیکن حج جن پیسوں سے کیا جا رہا ہے وہ حرام ہیں یا حلال
کتنے لوگوں کو اس بات کا خیال ہے اکثر لوگ جو حج پر جانے کے لئے کاغذی
کارروائی ہوتی ہے اس میں دس جگہ رشوت دیتے ہیں …. گوشت ہمیں حلال چاہیئے
پر حلال پیسوں سے خرید رہے ہیں یا نہیں کتنے لوگ سوچتے ہیں ..؟ ایسے بھی
لوگ ہیں جو ہر سال عمرے پر جاتے ہیں لیکن ان کے آس پاس کتنے غریب نادار لوگ
فاقوں میں گزارتے ہیں کتنے لوگ سوچتے ہیں ؟ یہ اسلام کا بتایا ہوا راستہ
ہے جس پر ہم چل رہے ہیں ؟ حدیث ہے کہ ” علم مومن کی کھوئی ہوئی میراث ہے
جہاں سے ملے لے لو ” لیکن ہم تو اسکولز تباہ کر رہے ہیں ..جب تک ہم اندھی
تقلید کرتے رہیں گے .. خود سے علم ،تحقیق و شعور نہیں لائیں گے اپنے اندر
.. اسلام کی روح کو نہیں سمجھیں گے .. جب تب ہم اپنے اعمال و افعال میں
اخلاص نہیں پیدا کریں گے.. اس وقت تک کوئی دعا قبول نہیں ہوگی نہ کوئی
معجزہ ہوگا ..

Advertisements
This entry was posted in مذہب. Bookmark the permalink.

5 Responses to کمی کہاں ہے آخر

  1. Usama Bin Ladin نے کہا:

    kami hum logo men hi hain u r right 🙂

  2. جعفر نے کہا:

    کمی ہے جی ہمارے اعمال میں
    زندگی یزید اور آخرت حسین کی پانا چاہتے ہیں
    اسی لئے یہ حال ہے ہمارا۔۔۔

  3. fikrepakistan نے کہا:

    جعفر: پتا نہیں ایسے کیوں ہیں ہم لوگ ۔۔

  4. ہمارےایک ماموں ہیں۔ان سے اگر نماز کیلئے کہا جائے تو کہتے ہیں۔تم دشوار رستے سے جنت تلاش کرتےھو۔ بس مومن تو سیدھا جنت جائے گا کلمہ جو پڑھا ھے۔بس یہی نفسیات ہمارے مزاجوں میں گھسی پڑی ھے۔عمل کو اہمیت نہیں دیتے اہمیت نہ دینے کی وجہ سےغیر ذمہ داری ہمارے مزاج کوٹ کوٹ کر آچکی ھے۔جب غیر ذمہ داری ھو گئی تو یہی کچھ ھو گا۔جعفر بھائی جنت میں پلاٹ جو ھے پریشانی کیسی۔

  5. fikrepakistan نے کہا:

    یاسر خوامخواہ جاپانی : جنت میں جگہ صرف عبادت سے ملتی تو اعمال کے لئے اتنی تلقین نہیں کی گئی ہوتی ۔۔ آپ کو پتہ ہے کتنے ہی لوگ مسلمانوں کے اس قول و فعل میں تضاد دیکھ کر دہریہ ہو جاتے ہیں ۔۔ کنفیوزن میں مذہب سے ہی بیزار ہوجاتے ہیں ۔۔

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s