دین کی غلط تشریحات


پچھلے دنوں میرے محترم بلاگر دوست کاشف نصیر نے محترمہ عنیقہ صاحبہ کی پوسٹ پر میرے دیئے ھوئے کمئٹس کے جواب میں کافی جذباتئ قسم کا جواب دیا میں ذاتی حیثیت میں کاشف کی دل سے عزت کرتا ھوں مگر اختلاف رائے سب کا حق ھے، میرے دوست نے بہت فخریہ انداز میں فرمایا کے محمد صلی علیہ وسلم کے ماننے والے مادی ترقی پر لعنت بھیجھتے ہیں، اور انہوں نے اس حقیقت سے بھی انکار کیا کے ہمارے ہاں مذہب کی غلط تشریحات نہیں کی گئی ہیں۔ ہر انسان کا اپنا زاویہ نظر ھوتا ھے میں نے یہ ہی محسوس کیا ھے کے ہمارے معاشرے میں دین کی غلط تشریحات کی گئی ہیں جس کی وجہ سے ملک و قوم تو چھوڑیں خود دین کو بہت نقصان پہنچ رہا ھے۔ جس کی چند مثالیں پیش خدمت ہیں۔ بات مادی ترقی سے شروع ہوئی ھے تو پہلے مادی ترقی پر ہی روشنی ڈالتے ہیں۔
مادی ترقی دین اسلام میں کہیں منع نہیں ھے، حدیث ھے کے مفلسی کفر تک لے جاتی ھے۔ مادی ترقی انسان کو مفلسی سے بچاتی ھے یعنی دوسرے لفظوں میں کفر سے بچاتی ھے، جب کے ہمیں اکژ وعظ کے دوران سننے کو ملتا ھے کے غربت میں عظمت ھے انسان غریب ھوگا تو اسے حساب دینے میں بھی آسانی ھوگی ایسی کئی باتیں ھیں جس کی وجہ سے آپ غور کریں کے جو بھی ایسے مذہبی لوگوں کی سنگت میں گیا وہ گوشہ نشین ھوجاتا ھے اسکی ترقی کا عمل رک جاتا ھے جب کے مذہب اس کے برعکس کہتا ھےغربت وہ لعنت ھے جس سے انبیاء اکرام نے پناہ مانگی ھے مگر یہ بات کوئی ملا نہیں بتاتا قوم کو ، اگر میاں منشاء جیسے لوگ بھی ان ہی ملاوں کی باتیں مان لیتے تو آج پاکستان مزید کتنی پستی میں ھوتا اندازہ ھے ؟ میاں منشاٰء جیسے لوگ بھلے آئیڈیل نہیں مگر ان کے توسط سے لاکھوں لوگوں کے گھر کا چولہہ جل رہا ھے کیا یہ دین کی خدمت نہیں ھے؟.
کسی گوشہ نشیں عابد سے کہیں بہتر وہ بزنس مین ھے جو دین پہ رہتے ھوئے ملک و قوم کی ترقی میں برابر کا حصہ لے گوشہ نشینی تو سب سے آسان کام ھے اور کیوں کے ھم مشکل کام کرنا نہیں چاہتے تو گوشہ نشینی جیسا سب سے آسان کام اپنا لیتے ہیں اور مادی ترقی کو کفر سمجھتے ہیں یہ ہیں ھمارے وہ رویے جس کی وجہ نہ صرف ملک و قوم کو بلکے مذہب کو بھی نقصان پہنچ رہا ھے۔ حضرت عثمان غنی رضی اللہ تعالی عنہہ مادی اعتبار سے بہت مظبوط تھے اور انکی یہ مادی ترقی اسلام اور مسلمانوں کے کتنے کام آئی یہ بھی سب جانتے ہیں، جس وقت پورا یورپ جاہلت کے اندھیرے میں ڈوبا ھوا تھا اس وقت صرف اسپین کے مسلمان مادی ترقی کے جھنڈے گاڑ رہے تھے اور یہ ہی دور مسلمانوں کا سب سے سنہری دور تھا کیوں کے وہ لوگ دین اسلام کے مغز کو سمجھنے والے لوگ تھے انہیں کسی نے یہ نہیں بتایا تھا کے مادی ترقی تو گالی ھے اس میں اپنا وقت برباد نا کرو وہ عظیم لوگ تھے وہ دین کے مغز کو صحیح انداز میں سمجھتے تھے وہ جانتے تھے کے قوموں کی بقا اور اسلام کی ترقی کے لئیے مادی ترقی کتنی ضروری ھے اہل علم کے لئیے وضیفہ تو حضرت عمر رضی اللہ تعالی عنہہ کے دور سے ہی شروع ھوگیا تھا جنکا کام ہی صرف غور ہ فکر کرنا تھا اور قوم میں علم پھیلانا تھا، جب تک ہمارا رشتہ علم کی طلب سے جٹرا رہا ھم پوری دنیا پر رول کرتے رہے اور جب سے ہم نے علم، غور و فکر تدبر تفکر سے اپنا رشتہ توڑا بس وہیں سے مسلمانوں کی بربادی شروع ھوگئی جو آج تک جاری و ساری ھے، قرآن میں تقریباً سات سو سے زیادہ جگہ غور و فکر تدبر تفکر کا حکم آیا ھے مگر ایک سازش کے تحت قرآن کے اس حکم کی تشہیر نہیں کی جاتی کے اگر یہ قوم علم غور و فکر تدبر تفکر کی طرف آگئی تو ان مذہب فروشوں کی دکانیں کہاں سے چلیں گی، غور کریں کے اگر افغانستان عراق لبنان فلسطین کے پاس اگر ایٹمی قوت ھوتی تو کیا تب بھی دنیا انہیں اس ہی طرح مارتی ؟ انڈیا بھونکتا رہتا ھے مگر ہم پہ حملہ کرنے کی جرت نہیں کرتا کیوں کے وہ جانتا ھے کہ ہم اسے مار کر ہی مریں گے، میرے عزیز اگر لعنت ہی بھیجنی ھے تو ان لوگوں پر بھیجو جو اس مادی ترقی نا کرنے کی وجہ سے آج سعودی عرب جیسی مقدس زمین کی حفاظت کافروں سے کروانے پر مجبور ہیں۔ تیل کی دولت سب سے زیادہ عرب ممالک کے پاس ھے مگر ان کے لئیے یہ کیچڑ سے زیادہ کچھ نہ ھوتا اگر یہ کافر اس تیل کی نشان دہی نہ کرتے اور اسے ریفائن کر کے نا دیتے تو، ڈوپونٹ وہ کیمکل ھے جس کے بغیر خام تیل ریفائن نہیں کیا جاسکتا یہ کیمکل بھی کافر ہی بناتے ہیں ایران میں تیل کی پیداوار وافر مقدار میں ھوتی ھے مگر ایران میں آئل ریفائنریز نہیں ہیں وہ خود اپنا تیل دوسرے ممالک سے ریفائن کرواتا ھے کیوں کےامریکہ نے ایران پر پابندی عائد کی ھوئی ھے کے دنیا کا کوئی ملک اسے یہ کیمیکل نہیں دے سکتا یہ ہیں نقصانات مادی ترقی پہ لعنت بھیجنے کے کے تیل عرب ممالک سے نکل رہا ھے مگر کیمیکل پر دسترس نہ ھونے کی وجہ سے سارے عرب ممالک آج بھی کافروں کے ہی محتاج ہیں اپنے تیل کو ریفائن کروانے کے لئیے۔
یہ میں کوئی سنی سنائی بات نہیں کر رہا میں نے خود تبلیغی اجتماع میں اپنے کانوں سے سنا ھے وعظ کرتے ھوئے کے علم تو صرف دین کا ھوتا ھے دنیا کا تو ہنر ھوتا ھے۔ یہ بھی ایک بلکل غلط تشریح ھے دین کی، اگر ایسا ھوتا تو جنگ بدر میں جو کافر قیدی بنا کے لائے گئے تھے ان سے حضور پاک صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کے جو قیدی پڑھا سکے دس مسلمانوں کو وہ آزاد ھوگا تو بھائی کوئی بتائے کے اگر علم صرف دین کا ھوتا ھے تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے کیا کافروں سے مسلمانوں کو دین کا علم سکھانے کے لئیے کہا تھا کیا؟ پوسٹ طویل ھوجائے گی ورنہ ایسے کئی معاملے ہیں جن میں جان بوجھ کر دین کی غلط تشریحات کر کے ہمیں بتائی گئی ہیں تاکے قوم جاہل رہے اور ان ملاوں کی دکانیں چلتی رہیں اور ایسے ہی معمالات کی وجہ سے پوری مسم امہ آج پوری دنیا میں زلیل و خوار ھے اور زلیل و خوار ہی رہے گی جب تک علم کی اہمیت کو نہیں سمجھیں گے جب تک دشمن کے برابر نہیں آئیں گے ایسے ہی پٹتے رہیں گے ایسے ہی کافروں کے محتاج رہیں گے ہر معاملے میں۔

Advertisements
This entry was posted in مذہب. Bookmark the permalink.

18 Responses to دین کی غلط تشریحات

  1. گفتاری نے کہا:

    فکر پاکستان صاحب،
    خوب اور مدلل لکھا آپ نے. لیکن مجھے امید کم ہے کہ اسلام کے تابناک ماضی کے مجاوروں پر کوئی اثر ہو گا. مزے کی بات یہ ہے کے مادی ترقی پر لعنت بھیجنے والے، کافروں کے بناتے ہوے کمپیوٹر اور انٹرنیٹ کو استعمال کرتے ہوے، کفر کی جعلی ترقی پر لعنت بھیجتے ہیں.
    آج جو ہمارے ساتھ ہو رہا ہے، اس کی وجہ صرف اور صرف علم سے دوری ہے. دین کے ٹھکیداروں نے "دنیاوی اور "دینی” علم میں تفریق کرتے ہوے یہ بھی نہیں سوچا کہ دین کا مطلب ہے دنیا میں رہنے کا طریقہ. پھر دینی اور دنیاوی علم میں فرق؟
    اقبال کے شاہینوں سے اپنے مفاد کا شکار کھیلنے والوں نے بابا جی کے کلام سے صرف قناعت اور کٹ مرنے والے اشعار ہی منتخب کیے اور باقی کلام کا ذکر ہی نہیں کیا . مثال کے طور پر:
    گھر پیر کا ہے بجلی کے چراغوں سے روشن
    مرید سادہ کو میسر نہیں مٹی کا دیا بھی
    صرف بابا جی پر موقوف نہیں، بھائی لوگ قرآن سے بھی اپنے کام کی آیات اٹھاتے ہیں.
    وسلام،
    گفتاری

  2. حسین نے کہا:

    قرآن حکیم صاحبان عقل کے لیے ہے۔ ۹۴۵ مرتبہ کائنات کو تحقیق کے ذریعے تسخیر کرنے کی بات کی گئی ہے۔ آپ نے جو موقف اختیار کیا ہے، قابل غور ہے۔

  3. fikrepakistan نے کہا:

    گفتاری صاحب بہت خوب تجزیہ کیا ھے آپ نے پوسٹ سے زیادہ اچھا آپ کا تجزیہ لگ رہا ھے مجھے۔

  4. Aniqa Naz نے کہا:

    خیال ہے کہ مادی ترقی پہ لعنت بھیجنے والے آپکی اس تحریر تک پہنچنے میں ناکام رہے ہیں ورنہ ضرور بتاتے کہ اس میں کیا کیا غلطیاں ہیں۔ اور آپکی دلیلوں کے جواب میں ذرا کچھ جاندار دلیلیں لاتے۔

    • fikrepakistan نے کہا:

      عنیقہ صاحبہ تجزیئہ کا بہت بہت شکریہ، اللہ قرآن میں اپنے رب ھونے کی دلیل دیتے ہیں تو اگر کوئی دلیل لائے اور ثابت کرے کہ میں نے غلط تشریح کی ھے تو میں دل سے مان لوں گا اور اسکا شکر گزار بھی رہونگا کہ اس نے مجھے صحیح راستہ دیکھنے میں مدد کی، پوسٹ کی طوالت کی مجبوری نہ ھوتی تو میں اور بہت مثالیں دے سکتا ھوں جن معاملات کی انتہائی غلط تشریح کی گئی ھے جو کے سبب ہیں آج ہماری پستی کی۔

  5. محب علوی نے کہا:

    سب سے پہلے تو میں آپ کو مبارکباد دوں گا کہ آپ نے جذباتیت کے جواب میں جذباتیت سے اجتناب کرنے کی بھرپور کوشش کی ہے اور صرف یہی ایک بات اس پوسٹ کی تعریف کے لیے کافی ہے۔

    دوسری بات میں یہ عرض کرنا چاہوں گا کہ آپ کی مثالیں صحیح ہیں البتہ لفظ کافر ایسا کٹیلا لفظ ہے کہ خواہ مخواہ اس میں طنز اور تشنیع چھلکنے لگتے ہیں اس لیے اس کی بجائے اگر غیر مسلم کا لفظ استعمال کر لیا کریں تو پوسٹ میں طنز کا شائبہ بہت حد تک رفع ہو جائے گا۔

    دو چشمی ھ کی بجائے آپ کو حلوائی والی ح استعمال کرنی چاہیے ( اچھی سے اچھی پوسٹ کا لطف املا کی مسلسل غلطیوں یا ھ اور ح کے غلط استعمال سے غارت ہو جاتا ہے) ، امید ہے اس طرف ضرور غور فرمائیں گے۔

    جاتے جاتے ایک چیز اور ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پیراگراف کا استعمال بھی قارئین کے لیے کافی مفید رہے گا 🙂

  6. fikrepakistan نے کہا:

    محب علوی صاحب رہنمائی کا بہت بہت شکریہ، آپ نے جن چیزوں کی طرف توجہ دلوائی ھے آئیندہ انشاءاللہ تعالی ان تمام چیزوں کو ملحوظ خاطر رکھوں گا۔

  7. م بلال نے کہا:

    بہت خوب زبردست۔ ایک بہت ہی جاندار تحریر اور وقت کی ضرورت کے عین مطابق ہے۔
    اللہ کرے زور قلم اور زیادہ ہو۔۔۔آمین

  8. عثمان نے کہا:

    تحریر خوب ہے۔ نیز بیان کئے گئے نقاط سے بھی متفق ہوں۔
    تاہم ایک کام کریں کہ کوئی بہتر تھیم منتخب کریں۔ موجودہ تھیم میں فقروں کے درمیان فاصلہ کم ہونے کی وجہ سے پڑھنے میں دشوار ہے۔ آراء پڑھنا بھی مشکل ہورہا ہے۔

  9. محمداسد نے کہا:

    کاشف نصیر کی جس بات کا آپ نے حوالہ دیا، براہ کرم اس کا ربط بھی میہا فرمادیں۔

  10. پنگ بیک: دین کی غلط تشریحات پارٹ ٹو۔ « گیلی دھوپ

  11. khokhar976 نے کہا:

    دین کی صحیح تشریح تو امام مہدی نے آ کر کرنی تھی۔

  12. UncleTom نے کہا:

    علم صرف دین کا ہوتا ہے ، دنیا کا تو ہنر ہوتا ہے ۔

    اس تشریح سے تبیلغیوں کی کونسی دکان چل گئی ؟؟؟

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s