Monthly Archives: مارچ 2011

کیا عجیب قوم ہیں ہم کھیل کو جنگ اور جنگ کو کھیل سمجھتے ہیں۔

کیا عجیب قوم ہیں ہم کھیل کو جنگ اور جنگ کو کھیل سمجھتے ہیں۔ کچھہ عقل و فہم سے عاری جہالت اور جذباتیت میں ڈوبے ہوئے خود کو مذہبی جماعت کے رہنما کہلوانے والے کہتے ہیں کے انڈیا سے جنگ … پڑھنا جاری رکھیں

شائع کردہ از ہمارا المیہ | 11 تبصرے

دل سے جو بات نکلتی ہے اثر رکھتی ہے. پر نہیں، طاقت پرواز مگر رکھتی ہے۔

دل سے جو بات نکلتی ہے اثر رکھتی ہے پر نہیں، طاقت پرواز مگر رکھتی ہے۔ مورخہ چھہ مارچ دوہزار گیارہ کو میں نے اپنے بلاگ پر مجرمانہ خاموشی کے نام سے ایک پوسٹ لکھی۔ https://fikrepakistan.wordpress.com/2011/03/06/مجرمانہ-خاموشی.  اس پوسٹ کا طعلق … پڑھنا جاری رکھیں

شائع کردہ از طرزعمل | 10 تبصرے

خدارا نظر ثانی، وہ بھی کم پڑے تو نظر ثالث!

کیوں زیاں کار بنوں سود فراموش رہوں فکر فردا نہ کروں محوغم دوش رہوں نالے بلبل کے سنوں اور ہمہ تن گوش رہوں ہمنوا میں بھی کوئی گل ہوں کے خاموش رہوں؟۔ وہ میرے پاس آیا اور سر جھکا کر … پڑھنا جاری رکھیں

شائع کردہ از ہمارا معاشرہ | 6 تبصرے

قصوروار کون ہم یا یہود و ہنود؟

محبت میں جنگ ہوتی ہے لیکن جنگ میں محبت نہیں ہوتی، فیشن بنا لیا ہے ہم نے کہ جو بھی واقعہ ہو جو بھی حادثہ ہو جو بھی بربادی ہو، اس میں اپنی خامیوں کو ڈھونڈنے کے بجائے ہم سارا … پڑھنا جاری رکھیں

شائع کردہ از ہمارا المیہ | 7 تبصرے

مجرمانہ خاموشی

وہ شخص مفتی صاحب کے کمرے میں داخل ہوا سلام کیا اور مفتی صاحب کے سامنے بیٹھہ گیا، مفتی صاحب میرے دو بچے ہیں بیوی ھے اور میں ہوں، یہ مختصر سا کنبہ ہے میرا، کرائے کے گھر میں رہتا … پڑھنا جاری رکھیں

شائع کردہ از ہمارا المیہ | 38 تبصرے

آستین کے سانپ

کون تصور کرسکتا تھا کہ وہ برطانیہ جسکی حکومت آدھی سے زیادہ دنیا پر پھیلی ہوئی تھی جسکی حکومت میں سورج غروب نہیں ہوتا تھا، جس کے روپے کی قدر کیا تھی اس بات کا اندازہ اس بات سے لگایا … پڑھنا جاری رکھیں

شائع کردہ از ہمارا المیہ | 55 تبصرے